تازہ تریندیسی ٹوٹکےصحت

اسپغول: صدیوں سے پیٹ کے امراض کی موثر دوا

اسپغول کے بیجوں میں فیٹس یعنی حشمی روغن پایا جاتا ہے۔ اس میں فالودہ نما جیلی جیسا لعاب بھی موجود ہوتا ہے جو انسانی جسم میں بیماری کے خلاف اپنا اثر دکھاتا ہے۔ اسپغول فائبر سپلی منٹس(غذائی ریشے) کا بہترین ذریعہ ہے۔سو گرام اسپغول 71گرام فائبر فراہم کرتی ہے۔

اسپغول فارسی کے دو لفظوں سے مل کر بنا ہے۔ ایک لفظ ”اسپ“ یعنی گھوڑا اور دوسرا ”غول“ یعنی کان۔ گویا گھوڑے کا کان یعنی اس دوا کی شکل گھوڑے کے کان سے ملتی ہے۔ فارسی کا یہ نام اس قدر مشہور ہوا کہ برصغیر میں بھی سب اسے اسپغول کے نام سے پکارنے لگے۔

اس کا پودا ایک گز بلند ہوتا ہے اور ٹہنیاں باریک ہوتی ہیں۔اس پودے کو پلانٹاگو اووٹا بھی کہا جاتا ہے۔ تاریخ کی کتابوں میں مذکور ہے کہ اسپغول کا اصل وطن ایران ہے۔ مگریہ دنیا میں اکثر جگہوں پر خودرو پیدا ہوتا ہے۔ اس کے سرخ رنگ اور سفیدی مائل چھوٹے بیج ہوتے ہیں جسے اسپغول کہتے ہیں۔ ذائقہ میں پھیکا ہوتا ہے اور منہ میں ڈالنے پر لعاب پیدا کرتا ہے۔ اس کا مزاج سرد اور تر ہوتا ہے۔اسپغول کے چھلکے کو سبوس اسپغول کہتے ہیں۔

عمومی طور پر سبوس اسپغول ہر گھر میں پیٹ کے امراض، نظام ہضم کی خرابی، موٹاپے اور اس سے جڑے امراض کے لیے استعمال ہوتا ہے اور ان امراض کے خلاف اسے ایک طرح سے Generic Drugکی حیثیت حاصل ہے۔

اسپغول میں پائے جانے والے اجزا:
اسپغول کے بیجوں میں فیٹس یعنی حشمی روغن پایا جاتا ہے۔ اس میں فالودہ نما جیلی جیسا لعاب بھی موجود ہوتا ہے جو انسانی جسم میں بیماری کے خلاف اپنا اثر دکھاتا ہے۔ اسپغول فائبر سپلی منٹس(غذائی ریشے) کا بہترین ذریعہ ہے۔سو گرام اسپغول 71گرام فائبر فراہم کرتی ہے۔

خون میں کولیسٹرول کی مقدار کم کرنے کے لیے اسپغول کے اثرات ایک زمانے سے تسلیم شدہ ہیں۔ امریکا کی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن (FDA)نے آج سے تقریباًدو دہائیاں قبل 1998میں کولیسٹرول اور دل کے امراض کے خطرات کے خلاف اسپغول کے اثرات کو تسلیم کرچکی ہے۔

اسپغول کے فوائد:

قبض کا خاتمہ:
اسپغول کا چھلکا صدیوں سے دافع قبض کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے، جسے کھانے کے فوراً بعد استعمال کیا جائے تو یہ معدے میں خوراک کے بچے ہُوئے ذرات کو بائنڈ کر کے چھوٹی آنت میں لیجاتا ہے جہاں یہ چھوٹی آنت سے پانی جذب کرتا ہے جس سے فضلے کا سائز بڑھتا ہے اور اُس میں موئسچرائزر پیدا ہوتا ہے اور قبض کا خاتمہ ہوتا ہے۔
ایک طرف کو اسپغول قبض ختم کرتا ہے تو دوسری جانب یہ ساتھ ہی ساتھ آنتوں کی صفائی بھی کر دیتا ہے جو ہماری صحت اور نظام ہاضمہ پر نہایت اچھے اثرات مرتب کرتی ہے۔یہ تحقیق ماہرین نے ایسے 170 افراد پر کی تھی جنہیں مستقل بنیادوں پر قبض کا مسئلہ لاحق تھا۔

ڈائریا کا خاتمہ:
اسپغول چھوٹی آنت سے پانی اپنے اندر جذب کر لیتا ہے جس سے ’اسٹول‘ کی ’تھکنیس‘ بڑھتی ہے اور آنتوں میں اس کی نقل و حرکت سُست ہوتی ہے جس کے نتیجے میں ڈائریا کا خاتمہ ہوتا ہے۔

1 2 3اگلا صفحہ

Leave a Reply

Back to top button