Welcome to HTV Pakistan . Please select the content and listen it   Click to listen highlighted text! Welcome to HTV Pakistan . Please select the content and listen it
تازہ ترینخبریںپاکستان سے

اومیکرون کا خطرہ سر پر آپہنچا

مرض سے بچاؤ اور اس کے حملے کی صورت میں سنگین صورت حال سے تحفظ کی خاطر قوت مدافعت بڑھانے کے تمام ضروری تدابیر اپنائی جانی چاہئیں۔

سندھ بالخصوص کراچی میں کووڈ 19کی نئی قسم اومیکرون کے واقعات میں غیر معمولی اضافہ دیکھا جا رہا ہے۔

شہر میں گزشتہ روز سوا تین سو افراد عالمی وبا کی اس نئی شکل میں مبتلا پائے گئے جس سے ملک کے اس سب سے زیادہ آبادی والے شہر میں کورونا وائرس کی پانچویں لہر کے آغاز کی نشان دہی ہوتی ہے۔

وفاقی محکمہ صحت کے مطابق’’سندھ میں گزشتہ 24گھنٹوں کے دوران کووِڈ 19کے 403نئے کیس سامنے آئے ہیں، جن میں سے 321کا تعلق کراچی سے ہے۔

وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و خصوصی اقدامات اسد عمر نے بھی اہل وطن کو بذریعہ ٹوئٹر متنبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’’ایک اور کووڈ لہر کے آغاز کے واضح شواہد سامنے آگئے ہیں جس کی توقع پچھلے کچھ ہفتوں سے کی جارہی تھی‘‘۔

محکمہ صحت کے حکام نے کراچی میں وبا کے پھیلاؤ میں تیزی کااصل سبب تین کروڑ آبادی کے اس شہر میں اب تک 60فیصد آبادی کی ویکسی نیشن نہ ہونے کو قرار دیا ہے جس کی بنا پر یہاں کورونا کی نئی قسم جنگل کی آگ کی طرح پھیلنا شروع ہو گئی ہے۔

اس معاملے میں کراچی کے بعد دوسرا نمبر لاہور کا ہے اور یہاں بھی ویکسی نیشن کرانے والوں کا تناسب اب تک صرف 50فیصد ہے، دونوں شہروں میں احتیاطی تدابیر کی پابندی بھی تقریباً ختم ہو چکی ہے۔

اسلام آباد میں یہ شرح 80فیصد کی قابلِ اطمینان حد تک ہے تاہم اومیکرون دنیا کے مختلف ملکوں میں جس قدر تیزی سے پھیلا ہے، اس کے پیش نظر اب تک ویکسین نہ لگوانے والے تمام شہریوں کو فوری طور پر ویکسی نیشن کرا لینی چاہیے، گھر سے باہر بازاروں، دفاتر، کارگاہوں اور مساجد میں ماسک کی ازسرنو مکمل پابندی کی جانی چاہیے

نیز مرض سے بچاؤ اور اس کے حملے کی صورت میں سنگین صورت حال سے تحفظ کی خاطر قوت مدافعت بڑھانے کے تمام ضروری تدابیر اپنائی جانی چاہئیں۔

معاشی بحالی کے عمل کو جاری رکھنے کیلئے کوشش کی جانی چاہیے کہ لاک ڈاؤن کے بغیر ہی حالات قابو میں رہیں۔

Leave a Reply

Back to top button
Click to listen highlighted text!