فن اور فنکار

آرٹسٹ بننے اور ٹیپ کیساتھ کریلہ دیوار پر چپکانے کا سوچ رہی ہوں: مہوش حیات

ویب‌ دیسک: پاکستان کی نامور اور تمغہ امتیاز کی حامل اداکارہ مہوش حیات نے کہا ہے کہ میں آرٹ سے محبت کرنے والوں میں سے ہوں لیکن میں کچھ چیزیں سمجھنے سے قاصر ہوں جسے آج کل آرٹ سمجھا جا رہا ہے۔
مہوش حیات نے اپنے ایک ٹوئٹ میں امریکا کی ایک آرٹ گیلری میں ایک لاکھ بیس ہزار ڈالر میں فروخت ہونے والے کیلے کی خبر پر تبصرہ کرتے ہوئے لکھا کہ دراصل میں بھی ایک آرٹسٹ بننے کے بارے میں سوچ رہی ہوں اور ایک کریلے کو بذریعہ ٹیپ دیوار پر چپکانے کے بارے میں سوچ رہی ہوں۔
یہ بھی پڑھیں! اداکارہ مہوش حیات سابق صدر پرویز مشرف کے حق میں تڑپ اُٹھیں
اداکارہ نے مزید لکھا کہ اگر ایک کیلا کروڑوں میں فروخت ہو سکتا ہے تو کریلا دیوار پر چپکانے سے حیرت انگیز فائدہ مل سکتا ہے۔
واضح رہے کہ چند روز سے امریکی ریاست فلوریڈا کی ایک آرٹ گیلری میں دیوار پر ٹیپ سے چپکا کیلا سب کی توجہ کا مرکز بنا ہوا ہے۔
یہ فن پارہ ایک اطالوی کامیڈین و آرٹسٹ ماریزیو کیٹیلان کا تھا جو میامی آرٹ بیزل میں ایک لاکھ 20 ہزار امریکی ڈالرز میں فروخت ہوا تھا۔
آرٹسٹ ماریزیو کی یہ کلیکشن 3 ایڈیشنز پر مشتمل تھی جس میں سے 2 ایڈیشن فروخت ہو چکے ہیں جب کہ اس ایڈیشن کا ایک پیس بچا ہوا ہے، اور یہ پیس 1 لاکھ 50 ہزار ڈالرز میں فروخت ہونے کی توقع کی جا رہی ہے۔
یہ بھی پڑھیں! مہوش حیات کی مسجد نبوی ؐ میں لی گئی تصویر سوشل میڈیا پر وائرل
بعد ازاں ڈیوڈ دتونا نامی شخص نے آرٹ گیلری میں موجود لاکھوں روپے مالیت کا دیوار پر ٹیپ سے چپکا کیلا اتارکر کھا لیا تھا جس پر وہاں موجود سب لوگ حیران رہ گئے تھے۔
ڈیوڈ دتونا کی جانب سے کیلا کھانے کے فوری بعد آرٹ گیلری کے ایک اسٹاف ممبر کی جانب سے تھوڑے غصے اور ناراضگی کا اظہار کیا گیا تاہم اس پر ان کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی گئی اور دیوار پر ایک اور کیلا چپکا دیا گیا تھا۔

Leave a Reply

Back to top button