تازہ تریندیسی ٹوٹکےصحت

بادام انسانی جسم اور روغن بادام حسن و آرائش کا خزانہ

غذائی لحاظ سے بادام کے 100 گرام میں 579 کیلوریز پائی جاتی ہیں، 21.15 گرام پروٹین، 49.93 گرام فیٹ، 21.55 گرام کاربوہائیڈریٹس، 12.50 گرام فائبر، 4.35 گرام شوگر پائی جاتی ہے۔وٹامنز اور منرلز کے اعتبار سے بادام بھر پور میوہ ہے جس میں 269 ملی گرام کیلشیم، 3.17 ملی گرام آئرن، 270 ملی گرام میگنیشیم، 481 ملی گرام فورسفورس، 733 ملی گرام پوٹاشیم اور 25.63 ملی گرام وٹامن ای پایا جاتا ہے۔

معالجن کہتے ہیں کہ سردی کا موسم جسم میں تازہ خون بنانے کا بہترین موقع فراہم کرتا ہے اور سردیوں میں کھائے جانے والے خشک میوے اپنے اندر وہ تمام ضروری غذائیت رکھتے ہیں جو جسم میں توانائی اور تازہ خون بنانے کے لئے ضروری ہوتے ہیں۔یہ میوے معدنیات اور حیاتین سے بھرپور ہوتے ہیں اور اسی غذائی اہمیت کے پیشِ نظر معالجین انہیں ”قدرتی کیپسول“ بھی کہتے ہیں۔
انہی میوہ جات میں سے ایک بادام بہت مشہور میوہ ہے اور سب لوگ اسے شوق سے کھاتے ہیں۔ بادام کو مغزیات کا بادشاہ بھی کہا جاتا ہے۔

زمانہ قدیم سے اس کی کاشت کی جا رہی ہے۔ بادام کی دو عمومی قسمیں ہیں۔ ایک کڑوا اور دوسرا میٹھا۔ کڑوا بادام کھانا نہیں چاہیے۔ یہ زہریلا ہوتا ہے۔ بادام کے تیل کو روغنِ بادام کہتے ہیں۔اس کا درخت عام طور پر 20 سے 25 فٹ تک اور بعض دفعہ اس سے بھی زیادہ لمبا ہوتا ہے۔ پتے اوپر سے چوڑے اور پیندے سے تنگ اور گنجان دانے دار ہوتے ہیں۔ پھل جب کچا ہوتا ہے تو سبز رنگ کا مخملی روئیں والا ہوتا ہے۔ اندر کی گری مزے میں کسیلی اور معمولی سی کھٹاس لیے ہوتی ہے۔ جب پھل پک جاتا ہے تو اوپر کا چھلکا پھٹ کر علیحدہ ہو جاتا ہے اور گٹھلی آسانی سے نکل جاتی ہے۔

بادام قدرت کی جانب سے بنی نوع انسان کیلئے ایک انمول تحفہ ہے، جو خوش ذائقہ ہونے کے ساتھ ساتھ بے شمار طبی فوائد کا حامل بھی ہے۔ یہ مختلف بیماریوں کے خلاف مضبوط ڈھال کے طور پر کام کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ بادام جسم کے درجہ حرارت کو بڑھانے اور موسم سرما کے مضر اثرات سے بچاؤ میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔ اعتدال کے ساتھ اس کا استعمال انسانی جسم کو مضبوط اور توانا بناتا ہے۔

بادام میں پائے جانے والی کیمیائی اجزا
طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ بادام میں وٹامن ای، کیلشیم، فاسفورس، فولاد اور میگنیشیم شامل ہوتا ہے، جبکہ اس میں زنک، کیلشیم، تانبا بھی مناسب مقدار میں پایا جاتا ہے۔ لہٰذا بادام کا استعمال بہت سی بیماریوں میں شفا بخش بھی ہوتا ہے۔

غذائی لحاظ سے بادام کے 100 گرام میں 579 کیلوریز پائی جاتی ہیں، 21.15 گرام پروٹین، 49.93 گرام فیٹ، 21.55 گرام کاربوہائیڈریٹس، 12.50 گرام فائبر، 4.35 گرام شوگر پائی جاتی ہے۔وٹامنز اور منرلز کے اعتبار سے بادام بھر پور میوہ ہے جس میں 269 ملی گرام کیلشیم، 3.17 ملی گرام آئرن، 270 ملی گرام میگنیشیم، 481 ملی گرام فورسفورس، 733 ملی گرام پوٹاشیم اور 25.63 ملی گرام وٹامن ای پایا جاتا ہے۔

ماہرین کے مطابق بادام ایک مکمل غذائیت والا میوہ ہے جس کے استعمال سے مجموعی صحت اور خوبصورتی میں اضافہ ہوتا ہے، خوبصورتی میں اضافے کے لیے بادام کا استعمال کیسے کیا جائے؟بادام کے تیل میں اومیگا تھری فیٹی ایسڈ پائے جانے کے سبب یہ ایک بہترین قدرتی موسچرائزر ہے جس کا استعمال بالوں اور چہرے کے لیے نہایت مفید ہے،

بادام بطور غذا
بیجوں اور مغزوں میں بادام ایک بہترین غذا ہے۔ بادام کھانے کا بہتر طریقہ یہ ہے کہ ان کی گریوں کو کچھ دیر پانی میں بھگو رکھنے کے بعد اچھی طرح پیس کر باریک پیسٹ بنالیا جائے۔ اس پیسٹ کو بادام کا مکھن کہتے ہیں۔ یہ آسانی سے ہضم اور بدن میں جذب ہوجاتا ہے۔ سبزی خور افراد اسے ڈیری کے مکھن پر ترجیح دیتے ہیں۔ یہ مکھن اُن بوڑھے افراد کے لیے خصوصی اہمیت رکھتا ہے جو دانت نہ ہونے کی وجہ سے گوشت کو اپنی غذا میں شامل نہیں کرسکتے۔ بادام کا مکھن کھانے سے وہ نہ صرف اعلیٰ معیار کی پروٹین حاصل کرلیتے ہیں بلکہ دیگر عمدہ غذائی اجزاء بھی انہیں مل جاتے ہیں۔

1 2 3 4 5 6 7اگلا صفحہ

Leave a Reply

Back to top button