Welcome to HTV Pakistan . Please select the content and listen it   Click to listen highlighted text! Welcome to HTV Pakistan . Please select the content and listen it
تازہ ترینخبریںپاکستان

بینظیر بھٹو نے والد کی تربیت کا مان رکھا اور عالمی لیڈر کا خطاب حاصل کیا

1993ءمیں ایک بار پھر حکومت ملی لیکن 3 برس بعد 1996 میں انہیں اقتدار سے محروم کردیا گیا، انیس سو اٹھانوے میں بینظیر بھٹو خودساختہ جلاوطن ہوگئیں۔ کبھی لندن تو کبھی دبئی میں سکونت اختیار کی۔

سابق وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو اپنی بیٹی بے نظیر بھٹو سے بہت پیار کرتے تھے . انہوں نے بینظیر کی سیاسی تربیت کی تھی. بینظیر بھٹو نے اپنے والد کی تربیت کا مان رکھا اور عالمی لیڈر کا خطاب حاصل کیا.

بینظیر بھٹو 21جون 1953 کو کراچی میں پیدا ہوئی.. تعلیمی میدان میں امتیاز حاصل کیا. سیاست کے میدان میں پوری طرح قدم جمانے سے پہلے ایسی مشکلات دیکھیں کہ کوئی اور ہوتا تو کب کا سیاسی دنیا کو خیر باد کہہ گیا ہوتا لیکن بینظیر نے ایسا نہ کیا. انہوں نے بھٹو کی قید سے لیکر پھانسی تک، آمریت کے دور میں بینظیربھٹو نے ہرمصیبت اور مشکل کا ثابت قدمی اوردلیری سے مقابلہ کیا۔

1986 میں بینظیر بھٹو جلاوطنی کاٹ کرواپس وطن لوٹیں تو پیپلزپارٹی کی چیئرپرسن بن کر سیاست میں باقاعدہ قدم رکھا۔ 1987ءمیں آصف علی زرداری کے ساتھ رشتہ ازدواج میں منسلک ہوگئیں، بینظیر بھٹو 1988ءمیں پاکستان اورعالم اسلام کی پہلی خاتون وزیراعظم منتخب ہوئیں، تاہم ان کی حکومت زیادہ عرصے تک قائم نہیں رہ سکی اور 20 ماہ بعد ہی ان کی حکومت کا تختہ الٹ دیا گیا۔

1993ءمیں ایک بار پھر حکومت ملی لیکن 3 برس بعد 1996 میں انہیں اقتدار سے محروم کردیا گیا، انیس سو اٹھانوے میں بینظیر بھٹو خودساختہ جلاوطن ہوگئیں۔ کبھی لندن تو کبھی دبئی میں سکونت اختیار کی۔

18 اکتوبر 2007 کو بینظیر بھٹو وطن واپس آئیں. تو ان کے آنے کا انداز ، اپنے ملک کا آسمان دیکھنا اور وطن میں سانس لینا سمیت سب کچھ نیا تھا. حب الوطنی کے جذبے سے سرشار بیبنظیر اس مرتبہ نئے عزم کے ساتھ نظر آئیں. کراچی ایئرپورٹ پر لاکھوں کارکنوں نے ان کا تاریخی استقبال کیا، بینظیر بھٹو کو کراچی ایئرپورٹ سے قافلے کی صورت میں لے جایا گیا۔

اس دوران کارساز کے مقام پر ان کے قافلے پر خودکش حملہ کیا گیا، اس حملے میں درجنوں کارکن لقمہ اجل بنے، تاہم بینظیر بھٹو محفوظ رہیں۔
پھ ر وہ دن بھی آگیا جبب بینظیر کو دنیا سے رخصت ہونا تھا .ستائیس دسمبر 2007 کو بینظیر بھٹو راولپنڈی کے مشہور لیاقت باغ میں جلسے سے خطاب کے بعد واپس روانہ ہوئیں۔ کارکنوں کے نعروں کا جواب دینے کے لیے جونہی گاڑی سے سر باہر نکالا، قاتل نے گولی چلا دی. سیاست ایک روشن باب بند ہو گیا.آج بینظیر بھٹو اپنے والد کے پاس ہی آسودہ خاک ہے .بینظیر بھٹو سیاسی طور پر آج بھی مثال ہے اورہمیشہ مثال رہے گی .

Leave a Reply

Back to top button
Click to listen highlighted text!