تازہ تریندیسی ٹوٹکےصحت

زرشک شیریں آئل: صحت و طاقت کا انمول قدرتی خزانہ

زرشک شیریں آئل میں وٹامن اے، وٹامن بی، بی ون، وٹامن ای،وٹامن سی پائے جاتے ہیں۔ اس لئے اسے وٹامن کا سپرسٹار بھی کہا جاتا ہے، علاوہ ازیں اس میں فولاد بھی موجود ہوتا ہے۔ ان میں سب اہم وٹامن سی ہے۔ حقیقت میں، زرشک شیریں میں وٹامن سی کی مقدار سنگترے کی نسبت چار گنا زیادہ ہوتی ہے۔ اس میں انٹی آکسیڈنٹس بھی وافر مقدار میں پائے جاتے ہیں۔

زرشک شیریں گیارہ ہزار سے ستر ہزار فٹ بلندی پر سرسبز پہاڑی علاقوں میں ایک جھاڑی نما پودہ ہوتا ہے جس میں قدرت نے بے مثال قوت، دماغی تقویت، نظر کی طاقت اور عینک کے توڑ کیلئے انسان کو تحفے کے طور پر بخشا ہے۔

غذائی اجزاء
زرشک شیریں آئل میں وٹامن اے، وٹامن بی، بی ون، وٹامن ای،وٹامن سی پائے جاتے ہیں۔ اس لئے اسے وٹامن کا سپرسٹار بھی کہا جاتا ہے، علاوہ ازیں اس میں فولاد بھی موجود ہوتا ہے۔ ان میں سب اہم وٹامن سی ہے۔ حقیقت میں، زرشک شیریں میں وٹامن سی کی مقدار سنگترے کی نسبت چار گنا زیادہ ہوتی ہے۔ اس میں انٹی آکسیڈنٹس بھی وافر مقدار میں پائے جاتے ہیں۔

قوت مدافعت بڑھائے
اس میں وٹامن سی اور انٹی آکسیڈنٹس کے علاوہ اینتھوسائینینز بھی موجود ہیں جو آپ کے مدافعتی نظام کو مضبوط بنانے، گلے میں سوزش اور فلو کی علامات کو کم کرنے میں مدد کر سکتے ہیں۔ یوں زرشک شیریں آئل قوت مدافعت بڑھا کر انسان کو نہ صرف مختلف بیماریوں سے محفوظ رکھتا بلکہ جسمانی طاقت میں بھی بے پناہ اضافہ کرتا ہے۔

ہڈیاں مضبوط بنائے
زرشک شیریں میں ہڈیوں کیلئے ضروری جز Boron موجود ہوتا ہے جبکہ اس میں موجود کیلشیئم بھی ہڈیوں کی مضبوطی میں مدد دیتے ہیں،آئل کے استعمال سے یہ اجزا زیادہ بہتر طریقے سے جسم میں جذب ہوتے ہیں، جس سے ہڈیوں کی کثافت میں بہتری آتی ہے۔

جلد کو تروتازہ رکھے
اس میں ایک ایسا کیمیائی نباتیاتی مواد پایا جاتا ہے جو ہماری جلد کو انتہائی تیز دھوپ کے نقصان دہ اثرات سے محفوظ رکھتا ہے۔ اس میں موجود وٹامن سی جسم میں پروٹین سے کلوجین بناتا ہے جو جلدکی حفاظت کرتا اور بڑھاپے کے عمل کو روکتا ہے۔

بلڈ پریشر قابو میں رکھے
زرشک شیریں آئل میں انٹی آکسیڈنٹس کی مقدار بلیوبیری سے دوگنازیادہ ہوتی ہے۔ یہ انٹی اکسیڈنٹس جسم میں دورانِ خون کا نظام بہتر بناتے ہوئے نہ صرف بلڈ پریشر کو کنٹرول کرتے بلکہ سردرد سے نجات دلاتے اور انسان کو جوان اور تندرست بھی رکھتے ہیں۔

1 2اگلا صفحہ

Leave a Reply

Back to top button