تازہ تریندیسی ٹوٹکےصحت

سرسوں کا تیل صحت کیساتھ ساتھ حُسن افزا بھی

سرسوں کا تیل نہ صرف حیاتین اور معدنیات (منرلز) کا مجموعہ ہے،بلکہ یہ بیکٹریا کش، فنگل کش اور وائرس کو دور رکھنے کی خصوصیات رکھتا ہے۔جبکہ سرسوں میں حیاتین الف،ب اور ج (وٹامنز اے،بی اور سی)کے علاوہ کیلسیئم،سوڈئیم،نمکیات،کلورین،فاسفورس،لحمیات (پروٹینز) فولاد اور گندھک بھی پائی جاتی ہے۔ اسے گوشت کا نعم البدل کہا جاتا ہے۔

سرسوں پاکستان کی فصل ہے۔ موسم بہار میں اس کے پھول نکلتے ہیں جوزرد رنگ کے ہوتے ہیں۔یہ پھول بہت خوبصورت ہوتے ہیں اور موسم بہار کی رونق میں اس سے اضافہ ہوتا ہے۔ان پھولوں کے اندر بیج بنتے ہیں ان بیجوں میں سے تیل نکالا جاتا ہے جوسرسوں کاتیل کہلاتا ہے۔سرسوں کا تیل مختلف قسم کی ادویات میں بھی استعمال ہوتا ہے سرسوں کاتیل ایک بہترین خوردنی اشیاء سمجھا جاتا ہے۔آیوروید میں سرسوں کے تیل کو تمام تیلوں میں سے سب سے فائدے مند تصور کیا جاتا ہے۔

سرسوں کا تیل پرانے وقتوں میں کھانے پکانے کے لیے نہایت شوق سے استعمال کیا جاتا تھا۔ آج بھی خاص طور پر دیہی علاقوں میں سرسوں کا تیل ہی استعمال کیا جاتاہے، یہ صرف کھانا پکانے کے لیے ہی نہیں،بلکہ بطور دوا بھی اپنا جواب نہیں رکھتا۔

سرسوں کا تیل صحت افزا ہونے کے ساتھ ساتھ حُسن افزا بھی ہے۔ پرانے وقتوں سے ہی خواتین اپنی جِلد اور بالوں کی خوب صورتی اور صحت کے لیے اسے استعمال کرتی آرہی ہیں۔سرسوں کا تیل جِلد اور بالوں کی خوب صورتی و رعنائی میں اضافہ کرنے میں نہایت اہم کردار ادا کرتا ہے۔

سرسوں کے تیل میں شامل کیمیائی اجزا
سرسوں کا تیل نہ صرف حیاتین اور معدنیات (منرلز) کا مجموعہ ہے،بلکہ یہ بیکٹریا کش، فنگل کش اور وائرس کو دور رکھنے کی خصوصیات رکھتا ہے۔جبکہ سرسوں میں حیاتین الف،ب اور ج (وٹامنز اے،بی اور سی)کے علاوہ کیلسیئم،سوڈئیم،نمکیات،کلورین،فاسفورس،لحمیات (پروٹینز) فولاد اور گندھک بھی پائی جاتی ہے۔ اسے گوشت کا نعم البدل کہا جاتا ہے۔

سرسوں کے تیل میں میں کثیر مقدار میں بیٹا کیروٹین (BETACAROTENE)ہوتی ہے۔بیٹا کیروٹین جسم میں جا کر حیاتین الف میں تبدیل ہوجاتی ہے۔ سرسوں کے تیل میں فولاد، چربیلا تیزاب (فیٹی ایسڈ)، کیلسیئم اور میگنیز ے ئم جیسی اہم معدنیات پائی جاتی ہے، جو بالوں کی نشوونما میں کلیدی کردار ادا کرتی ہیں۔ اس میں موجود مونوسچورٹیڈ فیٹی ایسڈز یہ جسم میں نقصان دہ کولیسٹرول کی سطح کم کرتے ہیں۔

سرسوں کے تیل کے جادوئی اثرات

دانتوں کو جگمگائیں:
چٹکی بھر آئیوڈین سے پاک نمک لیں اور کچھ مقدار میں سرسوں کے تیل میں شامل کردیں، اگر چاہیں تو چٹکی بھر ہلدی کا بھی اضافہ کرسکتے ہیں۔اس کے بعد مکسچر کو لیں اور شہادت کی انگلی سے اس سے دانتوں پر دو منٹ تک مالش کریں۔ اس کے بعد چند منٹ کے لیے منہ بند کرکے رکھیں اور پھر نیم گرمی پانی سے کلیاں کرلیں اور اس مکسچر کا استعمال معمول بنانے سے چند دنوں میں آپ نمایاں فرق دیکھ سکیں گے۔

دل کی صحت کے لیے فائدہ مند:
امریکن جرنل آف کلینیکل نیوٹریشن میں شائع ایک تحقیق کے مطابق کھانوں میں سرسوں کے تیل کو شامل کرنے دل کی صحت کے لیے فائدہ مند ثابت ہوتا ہے، اس میں موجود مونوسچورٹیڈ فیٹی ایسڈز یہ جسم میں نقصان دہ کولیسٹرول کی سطح کم کرتے ہیں جبکہ خون میں چربی کی سطح مستحکم رکھ کر اس کی گردش میں مدد دیتے ہیں۔

ایڑیاں پھٹنے اور جلد ٹوٹ جانے والے ناخنوں کا مسئلہ:
ایڑیاں پھٹنے کا مسئلہ مون سون اور سردیوں میں کافی عام ہوجاتا ہے اور اس سے نجات کے لیے موم اور سرسوں کے تیل کی یکساں مقدار کو مکس کرکے گرم کریں، جس سے وہ گاڑھا ہوجائے گا۔ ایڑیوں کے متاثرہ حصے پر اس مکسچر کو لگائیں اور کاٹن کی جرابیں پہن کر سوجائیں۔ اسی طرح سرسوں کا تیل ناخن پر لگانا اس کی سطح پر جذب ہوکر انہیں غذائیت فراہم کرکے مضبوط کرتا ہے۔

1 2 3 4 5 6 7 8اگلا صفحہ

Leave a Reply

Back to top button