تازہ ترینخبریںٹیکنالوجی

فیس بک کا نئے نام سے خود کو دوبارہ متعارف کروانے کا منصوبہ

یہ خبر ایک ایسے وقت میں آئی ہے جب کمپنی کو اپنے کاروباری طریقوں پر امریکی حکومت کی بڑھتی ہوئی اسکروٹنی کا سامنا ہے۔

سماجی رابطے کی مقبول ترین ویب سائٹ فیس بک آئندہ ہفتے ایک نئے نام کے ساتھ خود کو دوبارہ متعارف کرنے کی منصوبہ بندی کررہی ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے ’رائٹرز‘ کی رپورٹ کے مطابق دی ورج نے مذکورہ معاملے سے براہ راست آگاہی رکھنے والے ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے مذکورہ دعویٰ کیا۔

دی ورج کی رپورٹ کے مطابق فیس بک کے چیف ایگزیکٹو افسر (سی ای او) مارک زکربرگ 28 اکتوبر کو کمپنی کی سالانہ کنیکٹ کانفرنس میں نام کی تبدیلی کے بارے میں بات کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں اور جلد یہ نام سامنے آسکتا ہے۔

تاہم اس حوالے سے سوال کے جواب میں فیس بک نے کہا کہ کمپنی ’افواہوں یا قیاس آرائیوں‘ پر تبصرہ نہیں کرتی۔

یہ خبر ایک ایسے وقت میں آئی ہے جب کمپنی کو اپنے کاروباری طریقوں پر امریکی حکومت کی بڑھتی ہوئی اسکروٹنی کا سامنا ہے۔

امریکا کی دونوں سیاسی جماعتوں کے قانون سازوں نے فیس بک کے ذریعے کانگریس میں بڑھتے ہوئے غصے کی مثال دیتے ہوئے کمپنی سے پوچھ گچھ شروع کی ہے۔

دی ورج کی رپورٹ میں مزید کہا گیا کہ ری برانڈنگ، فیس بک کی سوشل میڈیا ایپ کو ایک پیرنٹ کمپنی کے ماتحت کئی مصنوعات میں سے ایک کے طور پر پیش کرے گی جو انسٹاگرام، واٹس ایپ، اوکولس اور دیگر کی نگرانی کرے گی۔

خیال رہے کہ سلیکون ویلی میں یہ کوئی غیر معمولی بات نہیں ہے کہ کمپنیاں اپنے نام تبدیل کریں کیونکہ وہ اپنی خدمات کو توسیع دینے کے لیے ایسا کرتے ہیں۔

گوگل نے 2015 میں الفابیٹ انکارپوریشن کو ایک ہولڈنگ کمپنی کے طور پر قائم کیا تھا تاکہ وہ اپنی سرچ اور اشتہاری کاروبار سے آگے بڑھے، اپنے خودمختار گاڑیوں کے یونٹ اور ہیلتھ ٹیکنالوجی سے لے کر دور دراز علاقوں میں انٹرنیٹ خدمات کی فراہمی تک مختلف دیگر منصوبوں کی نگرانی کرے۔

رپورٹ کے مطابق سائٹ کی ری برانڈنگ کا اقدام نام نہاد میٹاورس، ایک آن لائن دنیا کی تعمیر پر فیس بک کی توجہ کی عکاسی کرے گا جہاں لوگ ورچوئل ماحول میں نقل و حرکت اور بات چیت کے لیے مختلف آلات استعمال کر سکتے ہیں۔

فیس بک نے ورچوئل رئیلٹی (وی آر) اور آگمینٹڈ رئیلٹی(اے آر) میں بہت زیادہ سرمایہ کاری کی ہے اور اپنے لگ بھگ ارب صارفین کو کئی ڈیوائسز اور ایپس کے ذریعے کنیکٹ کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

گزشتہ روز فیس بک کی انتظامیہ نے کہا تھا کہ وہ حقیقت سے قریب تر انٹرنیٹ کا نیا نطام ’میٹاورس‘ بنارہی ہے جس کے لیے آئندہ پانچ سال کے دوران یورپ میں 10 ہزار افراد کو ملازمت فراہم کی جائے گی۔

مارک زکر برگ رواں برس جولائی سے اس حوالے سے بات کر رہے ہیں اور تین دہائی قبل یہ لفظ سائنس فکشن ناول (ڈسٹوپین ناول) میں پہلی مرتبہ استعمال ہوا تھا، جس کا حوالہ دیگر ٹیکنالوجی فرمز بھی دیتی ہیں۔

دی ورج کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کمپنی کا ممکنہ نام کا تعلق ہورائزن (افق) سے ہوسکتا ہے۔

حال ہی میں فیس بک نے اپنے ان ڈیولپمنٹ وی آر گیمنگ پلیٹ فارم کا نام ’ہورائزن‘ سے تبدیل کرکے ’ہورائزن ورلڈز’ کردیا ہے۔

Leave a Reply

Back to top button