تازہ ترینخبریںکاروبار

پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10 روپے 30 پیسے تک کمی کی تجویز

ورکنگ پیپر کے مطابق ریگولیٹر نے پیٹرول کی ایکس ڈپو قیمت میں 10 روپے 30 پیسے اور ہائی اسپیڈ ڈیزل کی ایکس ڈپو قیمت میں 8 روپے 65 پیسے فی لیٹر کمی کا حساب لگایا ہے۔

اگر حکومت آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی (اوگرا) کے حساب کتاب کو قبول کرلیتی ہے تو بدھ کو (آج) آئندہ 15 روز کے لیے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10 روپے 30 پیسے فی لیٹر تک کمی ہو سکتی ہے۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق پیٹرولیم ڈویژن کے ذرائع نے بتایا کہ اوگرا کی جانب سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں سے متعلق ورکنگ پیپر وزارت خزانہ کو پہنچا دیا گیا۔

کاغذ پر متعین کردہ قیمتیں موجودہ پیٹرولیم لیوی اور جنرل سیلز ٹیکس کی شرح، درآمدی برابری کی قیمت اور ڈیلرز اور او ایم سیز کے کمیشن پر مبنی ہیں۔

ورکنگ پیپر کے مطابق ریگولیٹر نے پیٹرول کی ایکس ڈپو قیمت میں 10 روپے 30 پیسے اور ہائی اسپیڈ ڈیزل کی ایکس ڈپو قیمت میں 8 روپے 65 پیسے فی لیٹر کمی کا حساب لگایا ہے۔

تاہم ایک سینئر اہلکار نے ڈان کو بتایا کہ وزارت خزانہ پیٹرولیم ڈویژن کی مشاورت سے ایک نظرثانی شدہ پیپر پر کام کر رہی ہے تاکہ آئل مارکیٹ کمپنیوں اور ڈیلرز سے ہونے والے معاہدے کے بعد ان کے کمیشن میں اضافوں کی مد میں پیٹرول اور ڈیزل پر بالترتیب 1.70 روپے اور 1.54 روپے کا اضافی چارج شامل کیا جا سکے۔

چنانچہ پیٹرول اور ڈیزل کی ایکس ڈپو قیمتوں میں بالترتیب 8 روپے 60 پیسے اور 7 روپے 10 پیسے کمی کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔

حکام کا کہنا تھا کہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں زیادہ کمی دیکھی جاتی لیکن گزشتہ 15 روز میں روپے کی قدر میں کمی کو جزوی طور پر بین الاقوامی منڈی میں گراوٹ کے اثرات سے پورا کیا گیا۔

یہ یکم ستمبر کے بعد قیمتوں میں پہلی کمی ہوگی جب پیٹرول اور ایچ ایس ڈی کی قیمت بالترتیب 118.30 روپے اور 115.03 روپے فی لیٹر تھی۔

تاہم اس کے بعد سے قیمتیں بڑھتی رہیں اور پیٹرول کی قیمت 145.82 روپے اور ڈیزل کی فی لیٹر 142.62 روپے تک جا پہنچی۔

اس وقت حکومت پیٹرول پر 2.34 روپے فی لیٹر اور ڈیزل پر 9.80 روپے فی لیٹر جنرل سیلز ٹیکس اور پیٹرول پر 13.62 روپے فی لیٹر اور ڈیزل پر 13.15 روپے فی لیٹر پیٹرولیم لیوی بھی وصول کررہی ہے۔

اس کے علاوہ پیٹرول پر 11.33 روپے فی لیٹر کسٹم/ڈیمڈ ڈیوٹی اور ڈیزل پر اس مد میں 10.45 روپے فی لیٹر وصول کیے جا رہے ہیں۔

یوں حکومت کی پیٹرول پر فی لیٹر آمدنی 27.30 روپے اور ایچ ایس ڈی پر 33.38 روپے فی لیٹر ہے۔

حکومت نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ سے ہر ماہ پیٹرول اور ایچ ایس ڈی پر پیٹرولیم لیوی 4 روپے فی لیٹر بڑھانے کا وعدہ کیا ہے تا کہ قانون کے تحت زیادہ سے زیادہ 30 روپے فی لیٹر تک پہنچ سکے۔

گزشتہ برس تک حکومت ایچ ایس ڈی اور پیٹرول پر 30 روپے فی لیٹر پیٹرولیم لیوی اور مٹی کے تیل اور لائٹ ڈیزل پر 6-8 روپے فی لیٹر لیوی وصول کر رہی تھی۔

Leave a Reply

Back to top button