مختصر تحریریں

کتاب: مخلص دوست، بہترین رہنما…… عدیل چوہدری

مطالعہ ہمارے ذہنوں کی غذا ہے جو سوچ کو وسعت دیتا، غوروفکر، شعور کو اجاگر کرتا اور جذبہ عمل کی ترغیب دیتا ہے جس سے انسان اپنی شخصیت کو نکھارتا ہے۔ یہ نکھار صدیوں کے تجربات، مشاہدات، فکروتدبر اور گردوپیش کو سمجھنے میں معاون ثابت ہوتا ہے۔
انسانی نظریات، تحقیقات اور ان گنت سوچوں کا ٹھاٹھیں مارتا سمندر کتب بین کی شخصیت کو پُراثر بناتا ہے جس سے اس کی استعدار اور تجربہ میں وسعت پیدا ہوتی ہے۔ انسان اپنے علم وتحقیق کا مقابلہ و موازنہ دوسروں سے کرتا اور اپنے اندر شعور کی قوت کو بیدار اور چشت رکھتا ہے۔
ایک سنجیدہ قاری اچھے قلم کاروں کے خیالات ونظریات اور الفاظ ومعنی کی خوشبو کو اپنے اندر سمانے کی جستجو میں رہتا ہے جو اس کی طبعیت کو مؤثر بناتی ہے۔کتب خانہ سے آشنا انسان کتابوں کو ہی کائنات کا خزانہ سمجھتا ہے، ہمیشہ ان سے فیض یاب ہوتا ہے۔ وہ جانتا ہے کہ کتاب خلوت کی بہترین ساتھی ہے جو روح میں علم وحکمت کی تشنگی بھر کر شخصیت کو پُراثر اور دلچسپ بناتی ہے۔
جیسے کتاب خاموش مگر اپنے اندر ہلچل لیے ہوتی ہے ایسے ہی یہ انسان کے من میں وسعت وگہرائی پیدا کر کے اسے عمیق نظری عطا کرتی ہے۔ یوں مطالعہ سوچنے سمجھنے کی صلاحیت کو جلا بخشتا، سوچ میں وسعت پیدا کرتا، گفتگو کو ٹھوس بناتا، دامن کو گوہر دانش سے بھرتا اور قائدانہ اصلاحیتوں کو اجاگر کرتا ہے۔ تبھی تو کہا جاتا ہے کہ قاری رہنما یعنی Reader ہی Leader ہوتا ہے.

Leave a Reply

Back to top button