Uncategorized

کلاسیکی حُسن کی سچی مثال: ادا وان منسٹیر

فیشن کی دنیا میں کامیابی بہت مشکل سے ملتی ہے اورمل بھی جائے تو اس کوبرقراررکھنا آزمائش سے کم نہیں ہوتا۔ اس صنعت میں کامیابی کے لیے محنت کے ساتھ ساتھ اچھی قسمت اور حسن کی نعمت بھی درکار ہوتی ہے، جس کے پاس یہ عناصر موجود ہوں، اسے کامیاب ہونے سے کوئی نہیں روک سکتا۔ ہم فلمی دنیا کے چہروں سے تو شناسا ہیں، لیکن جو چہرے فلموں کی زینت نہیں بنتے، پھر بھی کامیابی کی ضمانت ہیں، ان کا میدان ماڈلنگ ہوتا ہے۔ ایسا ایک چہرہ بوسنیا کی عالمی شہرت یافتہ ماڈل ”ادا وان منسٹیر Idda van Munster“ کا ہے۔
5501feb5e1ec1
پوری دنیا سے حسین خواتین کا انتخاب کرنے والی مغرب کی مشہور ویب سائٹ ”بیوٹی فل وومین پیڈیا ڈاٹ کوم“ نے 2013 میں 50حسین خواتین میں سے منسٹیر کو پہلا درجہ دیا تھا، جس کی وجہ اس کی معصوم اورجاذب نظر شخصیت ہے۔ یہ صرف حسین ہی نہیں بلکہ نہایت تعلیم یافتہ اور ذہین لڑکی بھی ہے۔ اس نے مختصر کیرئیر میں بے شمار کامیابیاں سمیٹی ہیں۔

”منسٹیر “ بوسنیا کی عالمی شہرت یافتہ ماڈل ہے۔ رسمی تعلیم فارمیسی کے شعبے میں حاصل کی، مگر کامیابی اسے ماڈلنگ میں ملی. اس کی زندگی میں پسند اور ناپسند کی بے حد اہمیت ہے، جبکہ کلاسیکی چیزوں سے لگاﺅ کا مزاج بھی اس کی شہرت کا ایک حوالہ ہے کیونکہ اس کو 1920 سے 1960 تک کا زمانہ بہت پسند ہے۔ اس عرصے کا فیشن، فلمیں، موسیقی اور دیگر فنون سے لگاﺅ ہے۔ یہی وجہ ہے، اس کی ماڈلنگ میں بھی کلاسیکی رنگ جھلکتا ہے۔ یہ بھی سچ ہے، کلاسیکی فیشن کے لیے جیسا چہرہ اور نقوش چاہیے، یہ اس معیار پر پورا اترتی ہے۔
5501feb8b7df9
منسٹیر نے اسی ویب سائٹ پر انٹرویو دیتے ہوئے کہا ”مجھے ان مخصوص 40 برسوں میں سے بھی 1940 سے 1950 والی دہائی بے حد پسند ہے۔ یہ وہ زمانہ ہے، جب دوسری جنگ عظیم زوروں پر تھی۔ جنگ کے بعد کا معاشرہ مجھے مبہوت کردیتا ہے۔ میرے لیے یہ دہائی ایک ایسا حسین احساس ہے، جس میں خود کو میں نے جکڑے ہوئے دیکھا، کیونکہ عہد حاضر میں ہم بہت سی چیزیں کھو چکے ہیں۔ میں ایک ایسی دنیا میں رہنا پسند کرتی ہوں، جہاں لوگ موبائل اور کمپیوٹر کے ذریعے ایک دوسرے کو الفاظ لکھنے کے عادی نہ ہوں۔ میں ای میل اور موبائل پر پیغام بھیجنے کے بجائے خط لکھنا پسند کروں گی۔ کار میں رکھے پرفیوم کے بجائے میں کھلی فضا میں فطرت کی دلکشی کو محسوس کرتے ہوئے سانس لینے کو ترجیح دوں گی۔“
5501feb8b40b4
منسٹیر کے ان خیالات کے بارے میں جان کر ایک لمحے کے لیے ایسامحسوس نہیں ہوتا، یہ وہی ماڈل ہے جس کا ماڈلنگ کی صنعت میں راج ہے۔ دنیا کے بہترین کمرشل ادارے اس کے چہرے اور حسن کے محتاج ہیں، ان تمام باتوں کے باوجود اس نے اپنی روح کے احساس کو زندہ رکھا۔

وہ رسمی اور مصنوعی رویوں سے بغاوت کا نعرہ بلند کرتے ہوئے کہتی ہیں ”40 کی دہائی کا انداز زندگی مجھے اعتماد بخشتا ہے، سکون دیتا ہے اور میرے حسن میں اضافہ کرتا ہے۔“
5501feb8bbc71
ادا وان منسٹیر کے فیشن میں کلاسیکی روایات سے اس حد تک لگاﺅ کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ اس کے پسندیدہ ہولی ووڈ اور یورپی فلمی ستارے انہی دہائیوں میں اپنے عروج پر تھے، جن سے اس کو محبت ہے۔ یہ فلمی دنیا کا روشن ترین دور ہے، جس میں بہترین فنکار ابھر کر منظر عام پر آئے۔ یہ بھی زندگی کو اپنے طریقے سے جینے کی خواہش رکھتی ہے، اس کومحسوس ہوتا ہے، زندگی کا ہردن خوبصورت ہے اس لیے اسے بھی خوبصورت دکھائی دینا چاہیے۔
5501feb91cf20
منسٹیر کو جو خواتین حسین لگتی ہیں،ان میں الزبتھ ٹیلر، جون کرافورڈ، اَن بیلتھ، جنجر روجرز، آڈرے ہیپ برن اور مارلین ڈائٹرک شامل ہیں۔ اس کے خیال میں یہ نفیس اور کلاسیکی روایات کی امین عورتیں ہیں، جنہوں نے فیشن کی صنعت کو ایک نئی زندگی اور زاویہ دیا۔ اس کی نظر میں میک اپ اور مصوری ہی دو ایسے اظہار کے طریقے ہیں، جن سے خوبصورتی جنم لیتی ہے۔
5501feb842da2
طرت کے حسن کو دریافت کرنے کی خواہش، اسے دنیا بھر میں سیاحت کے لیے اکساتی ہے، اس کو نئے مقامات دیکھنا اچھا لگتا ہے۔ جرمن، انگریزی اور بوسنین زبان پر عبور ہے، لیکن مادری زبان بولنے کو ترجیح دیتی ہے۔ اپنے خطے کے حسن پر اسے فخر ہے۔ اس کے مطابق اس کے ملک میں کلاسیکی روایات کی حامل خواتین ہیں اور جدید نظریات رکھنے والی عورتیں بھی، دونوں کا اپنا جداگانہ طرز زندگی ہے۔
5501feb5451f2
ادا وان منسٹیر 50 کی دہائی کی مقبول ماڈل ”ڈوویما۔Dovima“ کو اپنا آئیڈیل قرار دیتی ہے۔ فرصت کے اوقات میں کھلے آسمان کو دیکھنا اسے اچھا لگتا ہے۔ فلمیں دیکھنا، کتابیں پڑھنا، سیاحت اور چائے پینا پسند ہے۔ ان لمحات میں یہ اپنے خاندان اور دوستوں کے قریب رہنا پسند کرتی ہے۔ اس کی نظر میں محبت کا جذبہ قابل قدر ہے اور دوطرفہ ہوتو لمبی اڑان بھرتاہے۔
5501feb6469be
منسٹیر نے بچپن میں جن دو سرگرمیوں میں گرم جوشی سے حصہ لیا، وہ میک اپ اور مصوری کرنا تھا۔ یوں بھی کہا جاسکتا ہے، کہ اپنی باطنی دنیا کے اظہار کے لیے مصوری اس کا انتخاب تھا، جبکہ چہرے کی سجاوٹ کی علامت ظاہری دنیا تھی۔ یہ دونوں شوق آج تک اس کے ساتھ ہیں، اس نے ان صلاحیتوں کی وجہ سے بہت تیزی سے دوسروں کو اپنی طرف مائل کرلیا۔ سادہ مگر خوبصورت اظہار اس کی کمزوری ہے۔
5501feb72764f
دنیا کے تمام بڑے فیشن میگزینز میں شائع ہونے والی اس نوخیز ماڈل کا طرز زندگی ماضی سے جڑا ہوا ہے، اس کو محسوس ہوتا ہے جیسے یہ غلط دورمیں پیدا ہوگئی ہے، شاید اس کا یہی انداز اس کی مقبولیت کا ایک بڑا سبب ہے۔ آج اس کے چاہنے والوں کی تعداد لاکھوں نہیں بلکہ کروڑوں میں ہے۔ اس کو فیشن کی دنیا میں خوبصورتی کی شاندار مثال اور کامیابی کی ضمانت سمجھا جاتا ہے۔
5501feb970951
وسنیا سمیت دنیا بھر میں لوگ اس حسین چہرے کے چاہنے والے ہیں اور شاید اس طرز زندگی کے بھی، جس کا تعلق ماضی سے ہے۔ ادا وان منسٹیر حسن کی ایک ایسی تمثیل ہے، جس کو کچھ بیان کرنے کی ضرورت نہیں۔ اس کی خاموش تصویریں بولتی محسوس ہوتی ہیں، بشرطیکہ ان کو غور سے دیکھا جائے۔

Leave a Reply

Back to top button