تازہ تریندیسی ٹوٹکےصحت

کٹھل: معدنیات سے بھرپور دنیا کا سب سے بڑا پھل

جیک فروٹ انمول غذائی خصوصیات سے بھی بھرپور ایک بہترین پھل ہے۔ وٹامن اے، وٹامن سی،یلیشم، آئرن، پوٹاشیم، میگنیشیم، فولک ایسڈ، تھامین اور منرلز، رائبو فلاوپن، نیا سن اور دیگر بہت سے صحت بخش غذائی اجزاء کی کثیر مقدار اس میں موجود ہوتی ہے۔

کٹھل یعنی جیک فروٹ ایک ایسا پھل ہے جسے غذائیت سے مالامال تصورکیا جاتا ہے اوراس کو مختلف طریقوں سے خوراک میں شامل کیا جاتا ہے۔ کٹھل شہتوت کے خاندان کا ایک درخت ہے جس کا اصل وطن جنوب مشرقی ایشیا ہے۔ یہ بنگلہ دیش کا قومی پھل ہے۔ اس علاقے کے علاوہ یہ مشرقی افریقہ کے ممالک یوگنڈا اور ماریشس اور برازیل میں بھی پیدا ہوتا ہے۔ یہ کسی درخت پر لگنے والا دنیا کا دوسرا سب سے بڑا پھل ہے۔ عمومی طور پر ایک پھل 36 کلوگرام تک وزنی ہوتا ہے جس کی لمبائی 36 انچ اور قطر 200 انچ تک ہوتا ہے۔

یہ پھل سال میں ایک مرتبہ لگتا ہے اور جون میں بننے والے کچے کھٹل اگست کے آخر میں پک کر کھانے کیلیئے تیار ہو جاتے ہیں۔ کچا کٹھل سبزی کے طور پر پکایا جاتا ہے۔ بھارت، بنگلہ دیش، نیپال، سری لنکا، انڈونیشیا، کمبوڈیا اور ویتنام کے کھانوں میں کچا کٹھل کافی استعمال ہوتا ہے۔پکے ہوئے کٹھل میں سے میٹھے پیلے رنگ کے کوئے نکلتے ہیں جنھیں دوسرے پھلوں کی طرح کھایا جاتا ہے۔ اسے ڈبوں میں محفوظ کرکے برآمد بھی کیا جاتا ہے۔اس پھل کے جام اور مربے بھی بنائے جاتے ہیں۔

جناح باغ لاہور میں بھی اس منفرد پھل کے چند درخت موجود ہیں۔

کٹھل کے درخت کی دو اقسام ہیں ایک قسم کے درخت میں شاخوں پہ پھل آتا ہے جبکہ دوسری قسم کے درخت میں جڑوں میں پھل آتا ہے۔
شاخوں پہ لگنے والے پھل کی رنگت ابتدا میں گہرے سبز رنگ کی ہوتی ہے اور پکنے کے بعد ان کی رنگت ہلکی بادامی ہو جاتی ہے اور تیز چبھتی ہوئی خوشبو آنے لگتی ہے جبکہ جڑ میں آنے والے پھل پہلے زیر زمین ہی پکتے رہتے ہیں۔

درخت پر لگنے والا کٹھل اگرچہ میٹھا تو ہوتا ہے لیکن اس کا ذائقہ بہت زیادہ اچھا نہیں ہوتا۔ اس پھل کی ساخت کچھ ایسی ہے کہ جب اسے پکایا جائے تو یہ گوشت جیسا محسوس ہوتا ہے۔تاہم زمین پر یا جڑ میں لگنے والے جیک فروٹ کی مٹھاس بے مثال اور ذائقہ و خوشبو لاجواب ہوتا ہے۔

کٹھل میں پائے جانے والے کیمیائی اجزا:
جیک فروٹ انمول غذائی خصوصیات سے بھی بھرپور ایک بہترین پھل ہے۔ وٹامن اے، وٹامن سی،یلیشم، آئرن، پوٹاشیم، میگنیشیم، فولک ایسڈ، تھامین اور منرلز، رائبو فلاوپن، نیا سن اور دیگر بہت سے صحت بخش غذائی اجزاء کی کثیر مقدار اس میں موجود ہوتی ہے۔

کٹھل کے طبی فوائد:
ماہرین کے مطابق کٹھل سے کئی بیماریوں کا علاج بھی ہوتا ہے۔ یہ جسم کے لیے صحت مند فائبر کے حصول کا بہترین ذریعہ ہے۔

معدنیات کا خزانہ:
کٹھل چاہے تو آپ سبزی کے طور پر کھائیں یا پھر اسے پکا کر پھل کے طور پر اسکا استعمال کریں۔ اس سے آپ کو کیلیشم، آئرن، پوٹاشیم، میگنیشیم، فولک ایسڈ، تھامین اور منرلز اور غذائی اجزاء ملتے ہیں۔

قبض دور کرنے میں فائدہ مند::
کٹھل میں فائبر بھرپور مقدار میں ہے دستیاب ہے۔ یہی وجہ ہے کہ جن لوگوں کو قبض کی مسئلہ رہتا ہے یا جنکا ہاضمہ ٹھیک طریقے سے نہیں ہوپاتا ہے، انہیں کٹھل کی سبزی کا استعمال کرنا چاہیئے۔کٹھل کی سبزی ہاضمے کو بہتر بنا کر گیس کا مسئلہ، سخت موشن کا مسئلہ اور موشن کے دوران پریشر لگانے جیسی سبھی مسائل میں فائدے مند ہے۔

انفیکشن سے بچائے:
کٹھل کا پھل اور سبزی دونوں ہی ہمارے جسم کو فلو، وائرل اور فیور سے بچانے کا کام کرتے ہیں، کیونکہ اس میں موجود وٹامن سی ایک اینٹی آکسیڈینٹ کی طرح کام کرتا ہے۔ جو وائرل، وائرس اور بیکٹریا کو مارنے والی سفید خون کے خلیات بنانے میں مدد کرتا ہے۔ ڈینگو، ملیریا، فلو اور سب سے خطرناک کورونا سے بچانے کے لیے اگر ممکن ہو سکے تو آپ اپنے روزمرہ کی غذا میں کٹھل کے پھل اور سبزی کو شامل کریں، یہ آپ کے جسم کو مضبوط بنانے کا کام کرئے گا۔

جلد کیلئے فائدہ مند:
وٹامن سی ہمارے جسم میں کولیجن کی تیاری میں مدد کرتا ہے، یہ کولیجن ہماری جلد کو جوان بنائے رکھنے کے لیے ضروری ہے۔ ساتھ ہی وٹامن اے ہماری آنکھوں کی شریانوں (آرٹری) کو سکڑنے سے روکتا ہے۔ اس سے ہماری آنکھوں کی روشنی بڑھاپے میں بھی صحیح بنی رہتی ہے۔

قوت مدافعت کو طاقتور بنائے:
جیک فروٹ وٹامن سی کے حصول کا بہترین ذریعہ ہے۔ یہ وٹامن وائرل اور بیکٹیریل انفیکشن سے محفوظ رکھنے کے لئے قوت مدافعت کو طاقتور بنانے میں کلیدی کردار ادا کرتا ہے۔

کینسر سے بچاؤ:
وٹامن سی جیسے صحت بخش غذائی جز سے بھرپور ہونے کے ساتھ جیک فروٹ میں لگنانز، آئیسو فلیونز، اور ساپوننز نامی فائیٹونیوٹرینٹس بھی کثیر مقدار میں پائے جاتے ہیں جو کہ اینٹی کینسر اور اینٹی ایجنگ خصوصیات کے حامل غذائی اجزاء کی حیثیت سے خاص شہرت رکھتے ہیں۔
یہ اجزاء سرطانی خلیات کو پیدا کرنے والے وان کی افزائش کو مہمیز بخشنے والے فری ریڈیکلز کا صفایا کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

نظام انہظام کو بہتر بنائے:
جیک فروٹ کی اینٹی السرخصوصیات سے بھرپور پھل بھی مانا جاتا ہے۔ نظام انہظام کی خرابیوں و السر کی تکالیف کے خاتمے کیلئے یہ ایک بہترین پھل ہے۔جیک فروٹ کا ریشے دار ساخت کا حامل گودا قبض کے امکانات صفر کرکے نظام اخراج کو معمول کے مطابق رکھتا ہے۔

آنکھوں کی صحت:
ایک طاقتور غذائی جز یعنی وٹامن اے کی خوبیوں سے بھی بھرپور ہونے کے باعث جیک فروٹ کا استعمال جلد اور آنکھوں کی صحت کے حوالے سے بہترین ہے۔وٹامن اے جلد کی لچک و تروتازگی برقرار رکھنے اور بصری کمزوری درست کرنے کے علاوہ شب کوری دور کرنے کے حوالے سے ایک بہترین وٹامن کی حیثیت کا حامل ہے۔

توانائی میں اضافے کیلئے:
شکر کے سادے سالموں مثلاً فریکٹوز اور سکروز کی موجودگی کی وجہ سے جیک فروٹ کو توانائی میں اضافہ کرنے والے ایک زبردست پھل کی حیثیت سے بھی خاص شہرت حاصل ہے۔

بلند فشار خون کو کم کرے:
بلند فشار خون یا ہائی بلڈ پریشر کے مریض اگر جیک فروٹ استعمال کریں تو ان کا دوران خون معمول پہ آجاتا ہے۔
کیونکہ جیک فروٹ میں پوٹاشیم نامی ایک صحت بخش منرل یا معدن پایا جاتا ہے‘جو کہ دوران خون کو صحت بخش توازن میں قائم رکھتا ہے اور دل کی بیماری کے خطرات کے امکان بھی صفر ہو جاتے ہیں۔

ہڈیوں کی مضبوطی:
میگنیشیم وہ صحت بخش جز ہے جس کی جسم میں موجودگی غذا میں سے کیلشیم جذب کرنے کی جسمانی قوت میں اضافے کا سبب بنتی ہے اور کیلشیم کے ساتھ مل کر یہ جز ہڈیوں کی مضبوطی اور ان کی نشوونما میں کلیدی کردار ادا کرتا ہے۔جیک فروٹ میں میگنیشیم بھی صحت بخش توازن میں پایا جاتا ہے لہٰذا اس کا استعمال ہڈیوں کی صحت کے حوالے سے بھی اہم ہے۔

اینیمیا سے بچاؤ:
آئرن جیسے صحت بخش غذائی جز سے بھرپور ہونے کی وجہ سے بھی جیک فروٹ کا استعمال مفید ہے کیونکہ یہ خون بنانے والے سرخ خلیات کی افزائش کے ساتھ ساتھ دوران خون کو بھی متوازن رکھتا ہے۔

خون میں شکر کی معتدل مقدار:
کٹھل کم گلائسیمک انڈیکس والا فروٹ ہے جو خون میں موجود شکرکی مقدارکوکنٹرول میں رکھتا ہے جب کے اسے فائبر (ریشہ) حاصل کرنے کا ایک بہترین ذریعہ سمجھا جاتا ہے۔

نوٹ: یہ مضمون عام معلومات کے لیے ہے۔ قارئین اس حوالے سے اپنے معالج سے بھی ضرور مشورہ لیں۔

Leave a Reply

Back to top button