سپیشل رپورٹ

پاکستانی سرزمین پر افغانستان سے لائے گئے غیر ملکی اسلحے کے استعمال کا ایک اور ثبوت

پاکستانی سرزمین پر افغانستان سےلائے گئے غیر ملکی اسلحےکےاستعمال کا ایک اور ثبوت سامنے آگیا،تربت میں نیول ایئر بیس پر آپریشن کے دوران ایم 32 ملٹی شاٹ گرینیڈ، ایم 16 اے 4 اور ودیگر امریکی ساختہ اسلحہ برآمد ہوا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستانی سرزمین پر افغانستان سے لائے گئے غیرملکی اسلحے کے استعمال کے ثبوت پھر منظرعام پر آگئے، 26 ،25 مارچ کی رات بی ایل اے دہشت گردوں نے تربت میں پی این ایس صدیق پر حملے کی ناکام کوشش کی تھی۔

فورسز نے دہشت گردوں سے آپریشن کے دوران ایم 32 ملٹی شاٹ گرینیڈ لانچر برآمد کیا گیا جبکہ ایم 16 اے 4، نائٹ تھرمل ویژن ودیگر امریکی ساختہ اسلحہ بھی برآمد ہوا۔

دہشت گردوں نے 20 مارچ کو گوادر پورٹ اتھارٹی کمپلیکس پربزدلانہ حملےکی ناکام کوشش کی تھی ، بی ایل اے دہشتگردوں نے امریکی اسلحےکا استعمال کیا جو فورسز نے جوابی کارروائی میں برآمد کیا، برآمد امریکی اسلحے میں اےکے47،ایم 16اے4گرینیڈلانچر،ہینڈگرینیڈشامل تھے۔

اسی طرح 29 جنوری کو شمالی وزیرستان میں آپریشن کے دوران دہشت گرد نیک من اللہ ہلاک ہوا تھا ، ہلاک دہشتگردنیک من اللہ سےبرآمد امریکی ساختہ ایم 4کاربائن و دیگر اسلحہ شامل تھا۔

22 جنوری کو ژوب میں ہلاک 7 دہشت گردوں سے بھی اے کے 47، ایم 16 اے 2 ودیگر اسلحہ برآمدہوا جبکہ 19 جنوری کو میرانشاہ میں ہلاک 2 دہشت گردوں سے بھی غیرملکی ساختہ اسلحہ پکڑا گیا تھا۔

31 دسمبر کو باجوڑمیں ہلاک3دہشتگردوں سےامریکی ساختہ ایم 4کاربائن ودیگراسلحہ ملا تھا، 29 دسمبر کو بھی میر علی میں ہلاک دہشت گردوں سے اے کے 47، ایم 4 کار بائن ، گولہ بارود پکڑا گیا تھا۔

بی ایل اے نے انہی ہتھیاروں سے فروری 2022 میں نوشکی اور پنجگور میں ایف سی کیمپوں پرحملے کیے، 12 جولائی 2023 کو بھی ژوب گریژن پر حملے میں بھی کالعدم ٹی ٹی پی نےامریکی اسلحہ استعمال کیا تھا، برآمد اسلحہ افغان سرزمین پاکستان کیخلاف استعمال نہ ہونےکے دعوؤں پر بڑا سوالیہ نشان ہے۔

یورو ایشین ٹائمزنے کہا کہ پاکستان میں دہشت گرد کارروائیوں میں امریکی اسلحہ کا بھی استعمال کیاجا رہا ہے جبکہ پینٹاگون کےمطابق امریکانے افغان فوج کو کل 427,300 جنگی ہتھیار فراہم کئے تھے، امریکی انخلا کےوقت 300,000جنگی ہتھیار افغانستان میں رہ گئے تھے، اس بناء پر خطے میں گزشتہ دو سالوں کے دوران دہشت گردی میں وسیع پیمانے پر اضافہ دیکھا گیا، یہ حقائق اشارہ ہیں کہ افغان ریجیم ٹی ٹی پی کو مسلح اوردیگر تنظیموں کوبھی محفوظ راستہ دے رہی ہے۔ ARY News

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button